علامات مسیح علیہ السلام اور دجال قادیان

علامات مسیح علیہ السلام اور دجال قادیان 
کیا مرزا قادیانی مسیح ہو سکتا ہے ؟
محترم قارئین کرام ! قرآن و حدیث میں حضرت عیسیٰ علیہ السلام کی ولادت سے آسمان پر جانے اور پھر دوبارہ آنے تک کے حالات کو جس قدر تفصیل سے بیان کیا گیا ہے سوائے آنحضرتﷺ کے کسی اور نبی کے حالات کو اتنی تفصیل سے بیان نہیں کیا گیااس لیے مرزا قادیانی نے جب مسیح ہونے کا دعویٰ کیا تو حضرات علماء کرام نے سوال کیا کہ تم نے احادیث میں نزول مسیح علیہ السلام کی پیش گوئی دیکھ کر مسیح ہونے کا دعویٰ تو کر دیا ہے لیکن احادیث میں بیان کی گئی علامات مسیح علیہ السلام تو تم میں پائی نہیں جاتیں جواباً مرزا قادیانی نے احادیث رسولﷺکا انکار کرتے ہوئے لکھا :
میرے اس دعوے کی بنیاد حدیث نہیں بلکہ قرآن مجید اور وہ وحی ہے جو مجھ پر نازل ہوئی ہاں تائید کے طور پر ہم وہ حدیثیں بھی پیش کرتے ہیں جو قرآن مجید کے مطابق ہیں اور میری وحی کے معارض (مقابل)نہیں اور دوسری حدیثوں کو ہم ردی کی طرح پھینک دیتے ہیں ۔(نعوذباللہ) (خزائن ج19ص140) 
قارئین کرام !مرزا قادیانی کے احادیث کا انکار اور توہین کرنے کی وجہ یہی ہے کہ آنحضرتﷺ نے آنے والے سچے مسیح کی جو علامات بیان فرمائی ہیں ان میں سے کوئی ایک علامت بھی مرزا قادیانی میں نہیں پائی جاتی جو کہ مرزا قادیانی کے دعویٰ مسیحیت کے کذب پر سب سے بڑی دلیل ہے اب ہم ذیل میں احادیث مبارکہ میں بیان کردہ علامات ذکر کر کے اُن علامات کا مرزا قادیانی سے تقابل کریں گے جس سے قارئین کرام کو اندازہ ہو گا کہ حضورﷺ نے جو علامات آنے والے سچے مسیح کی بیان کی ہیں ان میں سے کوئی ایک بھی مرزا قادیانی میں نہیں پائی جاتی اور یہ کہ مرزا قادیانی اپنے دعویٰ مسیحیت میں ویسے ہی جھوٹا تھا جیسے فرعون دعویٰ خدائی میں ۔
احادیث میں بیان کردہ آنے والے سچے مسیح علیہ السلام کے حالات و علامات:
نام:
آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے آنے والے مسیح کا نام عیسیٰ بن مریم فرمایا ہے ۔
ینزل عیسیٰ بن مریم الی الارض۔(مشکوۃ باب نزول عیسیٰ) 
ترجمہ:مریم کے بیٹے عیسیٰ زمین پر نازل ہوں گے ۔
جبکہ مرزا قادیانی کا نام ’’مرزا غلام احمد قادیانی‘‘ تھا۔
والدہ کا نام:
آپﷺ نے آنے والے مسیح کی والدہ کا نام مریم صدیقہ بتایا ہے ۔
ینزل عیسیٰ بن مریم ۔(مشکوۃ)
ترجمہ:مریم کے بیٹے عیسیٰ علیہ السلام نازل ہوں گے ۔
جبکہ مرزا قادیانی کی ماں کا نام چراغ بی بی تھا جو کہ مائی گھسیٹی کے نام سے مشہور تھی ۔
جہت نزول:
آپﷺ نے فرمایا آنے والے مسیح علیہ السلام آسمان سے نازل ہوگا ۔
کیف انتم اذا نزل بن مریم من السماء فیکم ۔
ترجمہ:تمہارا خوشی کا کیا عالم ہوگا جب عیسیٰ علیہ السلام آسمان سے تم میں نازل ہوں گے ۔
مرزا قادیانی نے ابن مریم بننے کی ناکام کوشش بھی کی۔ لکھتا ہے کہ میں مرد سے عورت (مریم )بن گیا اور پھر مجھے حمل ہوا جس کی مدت دس مہینے تھی اور پھر میرے حمل سے بچہ (عیسیٰ )ہوا سو اس طرح میں عیسیٰ بن مریم بن گیا ۔ 
کیفیت نزول:
(1)آپﷺنے فرمایا آنے والے مسیح دو فرشتوں کے کندھوں (پروں )پر ہاتھ رکھے ہوئے نازل ہوں گے ۔
واضعاً کفّیہ علی اَجنحۃ ملکین۔(صحیح مسلم ج 2ص 1)
ترجمہ:وہ دو فرشتوں کے پروں پر ہاتھ رکھے ہوئے (اُتریں گے)۔
جبکہ مرزا قادیانی کے ولادت کے وقت دائی نے دو ہاتھوں پر وصول کیا ۔
(2)آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا بوقت نزول اُن کے سر سے پانی کے قطرے ٹپکیں گے (گویا وہ غسل کر کے آئیں گے)۔
اذا طأطأ رأ سہ قطر واذا رفعہ تحدّر منہ مثل جسمان کالوء لوء۔
جبکہ مرزا قادیانی ولادت کے وقت حیض کے خون کی نجاستوں میں لت پت تھا ۔
مکان نزول :
آپﷺ نے فرمایا کہ آنے والے مسیح علیہ السلام دمشق کے مشرقی جانب جامع مسجد کے سفید منارے کے پاس اُتریں گے ۔
فینزل عند المنارۃ البیضاء شرقیّ دمشق۔
کیا مرزا قادیانی سفید منارے پر پیدا ہوا ہے ؟مرزا قادیانی تو ساری زندگی دمشق دیکھ ہی نہیں سکا۔
مرزا قادیانی نے اس علامت کا مصداق بننے کی ناکام کوشش کی ہے مرزے نے اعلان کیا کہ مریدین چندہ دیں تاکہ منارہ تعمیر کروایا جا سکے چنانچہ مرزا قادیانی نے مینار کی تعمیر شروع کروا دی لیکن مرزا 1908میں مر گیا اور مینار 1916 میں مکمل ہوا ۔ 
کیفیت نزول:
آپﷺنے فرمایا آنے والے مسیح دو زرد رنگ کی چادریں پہنے ہوئے ہوں گے ۔
ینزل عند المنارۃ البیضاء شرق دمشق بین مہزد ذتین ۔
ترجمہ:وہ دو زرد رنگ کی چادریں اُوڑھے ہوں گے ۔
جبکہ مرزا قادیانی تو بالکل برہنہ سے پیدا ہوا ۔مرزا قادیانی اس حدیث کی بڑی مضحکہ خیز توجیہ کی ہے چنانچہ لکھتا ہے کہ دو زرد رنگ کی چادروں مراد دو بیماریاں ہیں ایک اُوپر کی بیماری اور ایک نیچے دھڑکی بیماری اور وہ دونوں بیماریاں مجھے لاحق ہیں اوپر کی تو دوران سر ہے یعنی سر بہت چکراتا ہے اور نیچے کی کثرت بول ہے یعنی پیشاب بہت آتا ہے حتیٰ کہ دن میں سو سو بار بھی آجاتا ہے ۔
مدت قیام:
آپ ﷺ نے فرمایا کہ آنے والے مسیح زمین پر 45سال قیام کریں گے ۔
یمکث فی الارض خمساً وّاربعین سنۃ ۔
(مشکوۃ ،باب نزول عیسیٰ ص490)
ترجمہ:وہ (حضرت مسیح)زمین پر 45سال رہیں گے۔
جبکہ مرزا قادیانی نے 1894ء میں دعویٰ مسیحیت کیا اور 1908 ء میں مر گیا اس طرح مسیحیت کی کل مدت 17سال بنی جو کہ اس کے جھوٹے ہونے کی بہت بڑی دلیل ہے ۔
نکاح و اولاد:
آپﷺنے فرمایا کہ آنے والے مسیح نزول کے بعد شادی کریں گے اور اُن کی اولاد بھی ہو گی ۔
یتزوّج و یولد ۔(باب نزول عیسیٰ علیہ السلام ص480)
ترجمہ:وہ شادی کریں گے اور ان کی اولاد ہوگی ۔
جبکہ مرزا قادیانی نے 1894ء میں دعویٰ مسیحیت کیا اور کہا کہ حدیث کے مطابق میرا نکاح ہوگا اور محمدی بیگم نامی خاتون کے بارے میں دعویٰ کیا کہ اللہ تعالیٰ نے آسمان پر اس عورت سے میرا نکاح کردیا ہے لیکن محمدی بیگم سے سلطان نامی شخص کا نکاح ہوگیا اور مرزا ساری زندگی خواب دیکھتا رہا ۔
حج و عمرہ:
آپﷺنے فرمایا آنے والے مسیح حج اور عمرہ ادا کریں گے ۔
لیہلن ابن مریم یضح الروحاء حاجاً او معتمراً۔(صحیح مسلم ج 1ص408)
ترجمہ:حضرت عیسیٰ علیہ السلام ضبح روحاء نامی گھاٹی سے حج یا عمرے کا تلبیہ پڑھیں گے ۔
جبکہ مرزا قادیانی حج و عمرہ کیا کرتا وہ تو ساری زندگی مکہ و مدینہ دیکھ ہی نہیں سکا ۔
عادل حاکم :
آپﷺ نے فرمایا آنے والا مسیح حاکم عادل کی حیثیت سے نازل ہوں گے ۔
ینزل فیکم ابن مریم حکما و عدلاً ۔(صحیح بخاری ج 1ص490)
ترجمہ:حضرت عیسیٰ عادل حاکم بن کر نازل ہون گے ۔
کسر صلیب:
آپﷺ نے فرمایا کہ آنے والے مسیح صلیب کو توڑ دیں گے یعنی نصاریٰ کے عقیدہ صلیب کو ختم فرما کر عیسائیت کا خاتمہ فر مادیں گے ۔
کسر الصلیب ۔
ترجمہ:وہ صلیب کو توڑ دیں گے ۔
جبکہ مرزا قادیانی تو خود صلیبی قوتوں کا کاشت کیا ہوا پودا تھا۔مرزا قادیانی کو مرے ہوئے سو سال سے زیادہ عرصہ ہوچکا ہے لیکن صلیبی عقیدہ (عیسائیت ) آج بھی دنیا بھر میں نہ صرف موجود ہے بلکہ پورے زوروشو ر سے اپنے عقائد کاپرچار کر رہے ہیں ۔
یضع الحرب :
آپﷺ نے فرمایا آنے والے مسیح جنگ کو روک دیں گے کیونکہ مسیح علیہ السلام کے آنے پر تمام ملتوں کا خاتمہ ہو جائے گا اور اسلام کو عالمی غلبہ حاصل ہو گا اس لئے جنگ بھی ختم ہو جائے گی۔
ویضع الحرب۔(بخاری شریف ج 1ص480)
ترجمہ:وہ جنگ کو روک دیں گے۔
کیا مرزا قادیانی کی آمد سے اسلام کو عالمی غلبہ حاصل ہو گیا ؟ اور کیا جنگ و قتال رک گیا ؟مرزا قادیانی کی آمد کے بعد دو عالمی جنگو ں کے علاوہ مختلف ممالک کی بیسوں چھوٹی بڑی جنگیں ہو چکی ہیں جو مرزے کے کذب پر منہ بولتاثبوت ہے ۔
قتل دجال :
آپﷺ نے آنے والے مسیح کے مقاصد میں سے ایک مقصد یہ بیان فرمایا کہ وہ دجال کو قتل کریں گے ۔
ویقتل الدجال۔( صحیح بخاری ج1ص490)
ترجمہ: وہ دجال کو قتل کریں گے ۔
جبکہ مرزا قادیانی نے دجال کے مقاصد کے بارے میں کلابازیاں کھا تارہا کبھی کہا دجال سے مراد عیسائی حکومت ہے کبھی کہا مراد عیسائی پادری ہیں کبھی کچھ کہا اور کبھی کچھ اگر دجال سے مراد عیسائی حکومت ہے تو کیا مرزے نے عیسائی حکومت کو ختم کر دیا وہ تو خود ساری زندگی اسی حکومت کی تعریفیں کرتا رہا اور اسی کی باج پر گزار کر گیا ہے ۔ اور عیسائی پادری مراد لئے جائیں تو کیا عیسائی پادریوں کا وجود ختم ہو گیا ؟
برکات خلافت:
آپﷺ نے آنے والے مسیح کے زمانہ خلافت کی برکات بیان فرمائی ہیں کہ ان کے زمانہ میں امن وامان عام ہو جائے گا ۔
کیا مرزا قادیانی کے زمانے میں امت کو وہ برکات مل سکیں اور کیا دنیا میں امن وامان قائم ہو گیا ؟ 
کیا بد امنی کا خاتمہ ہو گیا ؟ کیا زنا کاری ،ڈاکہ ،چوری ،قتل عام جیسے جرائم ختم ہوئے یا پہلے سے زیادہ ہوئے ؟۔
وفات وتدفین :
آپﷺنے آنے والے مسیح کی تدفین کے بارے میں فرمایا کہ وہ میرے مقبرے میں دفن ہو نگے۔
یدفن عیسیٰ بن مریم علیہا السلام مع رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم وصاحبیہ فیکون قبرہ رابعا۔(مجمع الزوائد ج8ص209)
ترجمہ : عیسیٰ علیہ السلام آنحضرت ﷺ اور ابو بکر و عمر رضی اللہ عنہماکے سات دفن ہو نگے اور انکی چو تھی قبر ہو گی۔
فیدفن معی فی قبری۔(مشکوٰۃ باب نزول عیسیٰ )
ترجمہ: وہ میرے ساتھ میرے مقبرے میں دفن ہو نگے ۔
جبکہ مرزا قادیانی لاہور میں برانڈتھ روڈ کی احمدیہ بلڈنگ میں اپنے ہی پاخانے پر گر کر مرا اور پھر قادیان میں گندے نالے کے قریب دفن ہوا۔